ﺍﺗﻨﺎ ﻃﺎﻗﺘﻮﺭ ہے

226

ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺯﯾﺮ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ﺳﯿﺮ ﺳﭙﺎﭨﮯ ﮐﺮ ﺭہا ﺗﮭﺎ، ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺍﺱ ﮐﯽﻧﻈﺮ ﺍﯾﮏ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﭘﺮ ﭘﮍﯼ ﺟﻮ ﺯﻣﯿﻦﺳﮯ ﺍﯾﻨﭧ ﭘﮭﯿﻨﮑﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﻩ ﺍﯾﻨﭧ ہوﺍﻣﯿﮟ ﻗﻼﺑﺎﺯﯾﺎﮞ ﮐﮭﺎﺗﯽ ہوﺋﯽ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ پہنچتی۔ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﻧﮯ ﺣﯿﺮﺍﻥ ہو ﮐﺮ ﻭﺯﯾﺮ ﺳﮯﮐﮩﺎ ﮐﯿﺎ ﻭﺟﻪ ہے ﮐﻪ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﮐﮭﮍﮮ ہو ﮐﺮ ﭘﮭﯿﻨﮑﯽ ہوﺋﯽ ﺍﯾﻨﭧ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ پہنچتی ہے، ﮐﯿﺎ ﯾﻪ ﺍﺗﻨﺎ ﻃﺎﻗﺘﻮﺭ ہے؟؟ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﺳﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ ﮐﻪ:ﺣﻀﻮﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻃﺎﻗﺖ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ﺳﺎتھ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﻋﻤﻞ ﮐﺎﺭﻓﺮﻣﺎہے،ﺍﮔﺮ ﺟﺎﻥ ﮐﯽ ﺍﻣﺎﻥ ﭘﺎﺅﮞ ﺗﻮ ﻋﺮﺽ ﮐﺮﻭﮞ؟ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: ﮐﮩﻮﮞ ﮐﯿﺎ ﮐﮩﻨﺎﭼﺎہتے ہو؟ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﺳﻼﻣﺖ،ﺿﺮﻭﺭﺍﺱ ﮐﯽ ﮔﮭﺮﯾﻠﻮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑہت ہی ﺍﭼﮭﯽ ﮔﺰﺭﺭہی ہے ،ﺍﺳﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽﻻﺣﻖ نہیں ﺍﺳﯽ ﻭﺟﻪ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽﺍﯾﻨﭧ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ پہنچتی ہے۔ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﻪ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ۔
ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺟﯽ ﺣﻀﻮﺭ۔ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺭﻭﺯ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﭼﻨﺪ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﻮ ﺗﺤﻘﯿﻖ پر ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﯾﮏ ہفتے ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻥ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﻧﮯ ﺟﻮ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ ﻭﻩ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺱ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺷﺎﻡ ہوﺗﮯہی ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮہر ﮐﮯ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﻣﯿﮟﺑﯿﭩﮭﯽ ﺭہتی ہے، ﻭﻩ ﺟﯿﺴﮯ ہی ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻗﺪﻡ ﺭﮐﮭﺘﺎ ہے۔ ﺍﺱ ﮐﯽﺑﯿﻮﯼ ﻧﮩﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻓﻮﺭﺍ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽﺑﺎﻟﭩﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﺌﮯ ﮐﭙﮍﮮ ﺭﮐﮭﺘﯽ ہے،ﻣﺰﺩﻭﺭ ﺟﯿﺴﮯ ہی ﻧﮩﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻓﺎﺭﻍ ہوﺗﺎ ہے،ﯾﻪ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎﻟﮕﺎﺩﯾﺘﯽ ہے، ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﻤﺎﻝ ﺍﺣﺘﯿﺎﻁ ﺳﮯ ﭘﮑﺎﺗﯽ ہے ﻧﻤﮏ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﭼﯽ ﮐﺎ ﺧﺎﺹ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﺘﯽ ہے،ﮐﮭﺎﻧﮯﺳﮯ ﻓﺎﺭﻍ ہوﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻟﯿﭩﻨﮯ ﮐﮯﻟﯿﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﻟﮕﺎﺗﯽ ہے، ﺳﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮہر ﮐﻮ ﭘﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯﺩﻭﺩﮪ ﺩﯾﺘﯽ ہے۔ﮐﺴﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﮐﺎﺫﮐﺮ نہیں ﮐﺮﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺻﺒﺮ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﻟﯿﺘﯽ ہے۔ ﺟﺐ ﯾﻪ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯﭘﯿﺶ ہوﺋﯽ ﺗﻮ ﻭﻩ ﻣﺰﯾﺪ ﺣﯿﺮﺍﻥ ہوا ﺍﺱ ﻧﮯ ﻭﺯﯾﺮ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ ﮐﻪ ﺍﻥ ﮐﮯﺩﺭﻣﯿﺎﻥ کچھ ﺭﻧﺠﺶ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺩﻭ ﭘﮭﺮ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﻧﺘﯿﺠﻪ نکلتا ہے۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﻪ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﺎ ہی ﮐﯿﺎ۔
ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﻪ ﺧﺒﺮ ﭘﮩﻨﭽﺎﺩﯼ ﮐﻪ ﺗﻤﻬﺎﺭﮮ ﺷﻮہر ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﻧﺎﺟﺎﺋﺰ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ہیں۔ ﺑﺲ ﭘﮭﺮ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺷﺎﻡ ﮐﻮ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﺟﻮﮞ ہی ﮔﮭﺮپہنچا ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮐﻪ ﻧﻪ ﺗﻮ نہانےﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﻟﭩﯽ ہے، ﻧﻪ ہیﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ہے، ﻧﻪ ہی ﺳﻮﻧﮯﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﺴﺘﺮ۔ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﯿﻮﯼ ﺳﮯﻭﺟﻪ ﭘﻮﭼﮭﯽ ﺗﻮ ﻭﻩ ﻟﮍﻧﮯ ﮐﻮ ﺩﻭﮌﯼ، ﻣﺰﺩﻭﺭ ﻧﮯ بہت ﺻﻔﺎﺋﯽ ﭘﯿﺶ ﮐﯽﻟﯿﮑﻦ ﺑﯿﻮﯼ ﺗﮭﯽ ﮐﻪ ﻣﯿﮟ ﻧﻪ ﻣﺎﻧﻮ۔ﻏﺮﺽ ﭼﻨﺪ ﺩﻥ ﯾﻪ ﻗﺼﻪ ﯾﻮﮞہی ﭼﻠﺘﺎ ﺭہاْ۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ ﮐﻪ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﺳﻼﻣﺖ ہم ﺳﯿﺮ ﭘﺮ ﭼﻠﺘﮯ ہیں ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ہیں۔ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﻭﺯﯾﺮ ﺳﻤﯿﺖ ﺳﯿﺮ ﭘﺮ ﻧﮑﻼ ﺍﻭﺭﺍﺳﯽ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭘﻬﻨﭽﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ہیں ﮐﻪ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﻻکھ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﺎ ہے ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﻨﭧ پہلی ﻣﻨﺰﻝ ﺳﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﺟﺎﺗﯽ ہی نہیں ہے۔ ﺑﺎﺩﺷﺎﺩﻩ ﻭﺯﯾﺮ ﮐﯽ ﻓﻬﻢ ﻭﻓﺮﺍﺳﺖ ﮐﻮﻣﺎﻥ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﯾﻘﯿﻦ ہوﮔﯿﺎ ﮐﻪﺍﯾﻨﭧ ﮐﻮ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ ﻃﺎﻗﺖ ﻧﮯنہیں ﺑﻠﮑﻪ ﮔﮭﺮﯾﻠﻮ ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽﻧﮯ ﭘﮩﻨﭽﺎﯾﺎ ہے۔

کیٹاگری میں : حکایات